20

امپائر پاکستان کے ساتھ ہیں ، اتحادی وزیراعظم عمران خان کے ساتھ ہیں،  تصادم  سے گریز کی ضرورت ہے ، وفاقی وزیر داخلہ 

لاہور:وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ امپائر پاکستان کے ساتھ ہیں ،میں جن کو جانتا ہوں ان کو پاکستان کی فکر ہے ،وہ سمجھارہے ہیں کہ اپنے معاملے باہمی افہام و تفہیم سے حل کریں ، وہ جمہوریت کے حامی ہیں،اگر معاملات حل نہ ہوئے تو پھر دما دم مست قلندر ہوگا،اتحادی وزیراعظم عمران خان کے ساتھ ہیں،جب انتخابات میں ایک سال رہ گیا ہے تو اس سے پہلے تصادم  سے گریز کی ضرورت ہے ،پاکستان کا تقاضا ہے  کہ ملک میں انارکی نہ پھیلے۔طویل عرصے کے بعد پاکستان میں او آئی سی  وزرائے خارجہ کانفرنس ہونے جارہی ہے ۔ منگل کو لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے  وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے کہا کہ 23سے30مارچ تک سات کا دورانیہ بہت اہم ہے ۔تحریک انصاف نے 27 مارچ کوجلسے کی تاریخ رکھی ہے  ۔ انہوں نے کہا کہ چار مہینے سے مولانا فضل الرحمان لانگ مارچ کی باتیں  کر رہے ہیں ، میری صرف یہ گزارش ہو گی  کہ ملک کو انارکی کی طرف مت جانے دیں، مولانا فضل الرحمان کا یہ کہنا کہ ہم نے لاٹھیاں تیل میں بھگوئی ہوئی ہیں انہیں یہ گفتگو زیب نہیں دیتی ،وہ عالم دین ہیں ان کو سمجھنا چاہیے کہ اس طرح   کی سیاست نہیں چلے گی کیونکہ اس کے نتائج بہت  خطرناک ہو سکتے ہیں اور کہیں عدم اعتماد کی بجائے کچھ اور ہی نہ نکل آئے۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن 23مارچ کو آئے ،سکیورٹی دیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن نے جو تحریک جمع کرائی ہے اس کے لحاظ سے تاریخ21یا 22بنتی ہے ،آخری 9دن سپیکر کے پاس ہیں جو28یا30 مارچ بنتی ہے ۔ شیخ رشید نے کہا کہ اپوزیشن آئے تحریک عدم اعتماد میں ووٹ دے اگر کسی کو روکا گیا تو میں ذمہ دار ہوں ،ہم نے ایف سی اور رینجر زکے دو ہزار جوان طلب کئے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ دنیا میں کیا ہو رہا ہے ،روس اور یوکرین  کی صورتحال سب کے سامنے ہے  ،پاکستان میں ایک طویل عرصے کے بعد او آئی سی کے وزرائے خارجہ کی کانفرنس ہو رہی ہے، اس میں شاید چین کے وزیر خارجہ بھی آئیں۔ انہوں نے کہا کہ جمہوری حکومت کی مدت پوری ہونے میں  تقریبا ایک سال رہ گیا ہے  ، جب انتخابات میں ایک سال رہ گیا ہے تو اس سے پہلے کسی قسم کی ناگوار صورتحال پیدا نہیں کرنی چاہئے ۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن سے172آدمی پورے نہیں ہو رہے ،ہمارے اتحادی خوش ہیں اور وہ مزے کر رہے ہیں۔ شیخ رشید نے کہا کہ سارے اتحادی عمران خان کی طرف آئیں گے جہاں تک 172 ووٹوں کا تعلق ہے تومارکیٹ میں بولیاں لگ رہی ہیں اور یہ لگتی رہتی ہیں ،بکنے والے کبھی کامیاب نہیں ہوتے وہ رسوا ہوتے ہیں، عوام کی نظروں میں ان کی کوئی عزت نہیں ہوگی ۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کی  مقبولیت  پہلے سے زیادہ ہو گئی ہے ، جبکہ لوگ چوروں کے پیچھے پڑ گئے ہیں ،پانچ چھ خاندان جن کی اولادوں کی جائیدایں ملک سے باہر ہیں وہ گھیرے میں آجا ئیں گے ۔شیخ رشید نے کہا کہ اگر خدانخواستہ کوئی تصادم ہوا تو ساری عمر یاد رکھیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ ساری قوم دیکھ رہی ہے اور مجھے اتحادیوں اور حکومت کے ممبران پر یقین ہے کہ وہ عمران خان کے ساتھ کھڑے ہوں گے،جو  با ضمیرہوتا ہے ،وہ امتحان کے وقت اپنے ساتھیوں کے ساتھ کھڑا ہوتا ہے ،وہ اچھے اور برے دن دوستوں کے ساتھ گزارتا ہے ،امتحان کے دن پیٹھ نہیں دکھاتا ہے  ،23سے30مارچ کے دوران عمران خان سر خرو ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ عدم اعتماد جمہوری عمل ہے اس کو خوش اسلوبی سے نبھانا ہے ۔شیخ رشید نے کہا کہ جس طرح کے حالات ہیں جس طرح عمران خان کے مقبول جلسے ہورہے ہیں ایسے میں اراکین اسمبلی بھی سوچیں گے ،تحریک انصاف نے 27مارچ کو 10لاکھ لوگوں کو اسلام آباد لانے کا ہدف دیا ہے ،کچھ اراکین کو خطرہ ہے کہ انہیں اگلی ٹکٹ نہیں دی جائے گی ، اپوزیشن نے انہیں کیا دینا ہے ،ہم آپ کو ٹکٹ دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ جلسہ کرنا عمران خان کا حق ہے ، ہمیں پاکستان کو اولیت دینی چاہیے ، آسٹریلیا کی ٹیم بھی پاکستان میں ہے ، ہمیں بڑی ذمہ داری کا ثبوت دینا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ کہ میں جانتا ہوں کہ شر پسند عناصر کو کس طرح روکوں گا اور کس طرح روکنا ہے ۔انہوں نے کہا کہ اپوزیشن کو اڑتالیس گھنٹے کیمرا ملا ہوا ہے ، جو پہلے گھر سے باہر نہیں نکلتے تھے ،وہ بھی کبھی ادھر او رکبھی ادھر ملنے جارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ میں30مارچ تک احتیاط برتوں گا۔ انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ امپائر پاکستان کے ساتھ ہیں او رپاکستان کا تقاضا ہے پاکستان میں انارکی نہ پھیلے۔انہوں نے کہا کہ میری بلاول سے پیدائشی صلح ہے ، بلاول سے کبھی جھگڑا نہیں ہوا ، شیخ رشید نے کہا کہ اللہ نہ کرے پیپلز پارٹی یا زرداری پنجاب کوفتح کرے ،اللہ تعالی عمران خان کو کامیابی دے ،اتحادی اور حکومتی ممبران ہر صورت میں ان کے ساتھ کھڑے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مجھے جس چیز کا خطرہ ہے وہ شیئر کی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ میری پارٹی سمجھدار،عقل مند اورمحب وطن پارٹی ہے ، سارے لوگ طعنہ دیتے ہیں کہ میں ایک ووٹ کا لیڈر ہوں ،میں جن کو جانتا ہوں ان کو پاکستان کی فکر ہے ،وہ انہیں سمجھارہے ہیں کہ اپنے معاملے باہمی افہام و تفہیم سے حل کریں ، وہ جمہوریت کے سپورٹر ہیں،میری پارٹی بہت سوچ سمجھ کر پاکستان کے لئے سوچ رہی ہے اور وہ واقعی پاکستان کے ساتھ ہیں۔شیخ رشید نے کہاکہ ڈی چوک میں حالات کنٹرول کریں گے،  مولانا فضل الرحان چار مہینے سے آ رہے ہیں، آنے دیں انہیں، عمران خان کے 4سال پورے ہوگئے ہیں ایک سال اور نکل جائے گا۔پیپلز پارٹی سے متعلق پوچھے گئے سوال کے جواب پر وفاقی وزیر داخلہ نے کہاکہ حکومت نے بلاول کے لانگ مارچ کو بہت زیادہ سکیورٹی دی ۔ایک سوال کے جواب میں شیخ رشید نے کہاکہ عمران خان کی حکومت نہیں جاتی ۔انہوں نے کہا کہ چوہدریوں کو مشورہ دوں گا وہ عمران خان کے ساتھ کھڑے ہوں ، میں انہیں مشورہ ہی دے سکتا ہوں باقی وہ اپنا فیصلہ خود کریں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں