45

وفاقی وزیر برائے قومی غذائی تحفظ و تحقیق سید فخر امام نے ساتویں D-8 زرعی وزارتی اجلاس سے خطاب کیا۔

اسلام آباد
وفاقی وزیر برائے قومی غذائی تحفظ و تحقیق سید فخر امام نے کہا کہ اس کانفرنس نے ہمیں ایک پلیٹ فارم فراہم کیا ہے، جہاں ہم غربت ، بھوک کے خاتمے اور موسمیاتی تبدیلیوں سے نمٹنے کے عزم کا اعادہ کر سکتے ہیں۔
وفاقی وزیر نے کہا کہ پاکستان ایگریکلچرل ریسرچ کونسل (PARC) کے ذریعے وزارت قومی غذائی تحفظ و تحقیقنے کلائمیٹ سمارٹ ایگریکلچر (CSA) کی تحقیق اور ترقی کے حوالے سے کچھ اہم کام کیا ہے۔ اس لیے میں PARC کو دوسرے ممالک کی مناسب تنظیموں کے ساتھ منصوبہ بندی کے مرحلے سے ہی اس اقدام کا حصہ بنانے پر زور دینا چاہوں گا۔
وفاقی وزیر نے کہا کہ حکومت کی بہترین زرعی پالیسیوں کے باعث; کووڈ کی وبا کے باوجود گندم، چاول، مکئی، گنا، آلو، پیاز اور مونگ پھلی کی پیداوار میں ریکارڈ سطح پر اضافہ ہوا ہے۔ یہ سال پاکستان کے زرعی شعبے کے لیے قابل ذکر رہا، اور ہماری معیشت کو ریکارڈ زرعی پیداوار کے ساتھ فروغ ملا، جو22۔ 2021 میں خوراک کی درآمدات پر کم انحصار کی نشاندہی کرتا ہے۔
مزید برآں، ہماری سازگار پالیسیوں اور مداخلتوں کی وجہ سے، زرعی اجناس کی برآمدات میں بھی نمایاں اضافہ ہوا ہے، جن میں آم 28.6%، لیموں 31.25% اور آلوو ¿ں میں 28% اضافہ ہوا ہے، اور خوراک کے ضیاع کو کم کرنے کے چیلنج سے نمٹنا ہے۔ میں خوراک کے ضیاع اوراس کے مسئلے پر عالمی سطح پرآگاہی پیدا کرنے کے لیے منتظمین کوسراہوں گا۔
٭٭٭

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں