18

وراثتی سرٹیفیکیٹس کا اجرا سٹیٹ آف دی آرٹ منصوبہ ہے، اس سے عدالتوں پر مقدمات کے دبائو میں 25 سے 30 فیصد کمی ہو گی ، وفاقی وزیر قانون اور انصاف بیرسٹر فروغ نسیم

اسلام آباد:وفاقی وزیر قانون اور انصاف بیرسٹر فروغ نسیم نے وراثتی سرٹیفکیٹس کے اجراءکو ایک سٹیٹ آف دی آرٹ منصوبہ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس کے دور رس اثرات مرتب ہوں گے، جب ہم یہ سسٹم بناکر چلے جائیں گے تو لوگ ہمیں یاد کریں گے۔ بدھ کو پنجاب میں وراثتی سرٹیفکیٹس کے اجرا کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے وزیر اعظم عمران خان کو زبردست الفاظ میں خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ اس منصوبہ کا کریڈٹ وزیر اعظم کو جاتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسلام آباد میں دو تین ماہ قبل اس منصوبہ کو شروع کیا گیا،350 کے قریب درخواستیں آئیں اور317 قانونی ورثا کووراثتی سرٹیفکیٹس  جاری کئے گئے۔ انہوں نے کہا کہ یہ ایک قابل عمل اقدام ہے، وکلاءنے اس پر کافی شور کیا، پنجاب کی گیارہ بارہ کروڑ کی آبادی میں اس کے اثرات آئیں گے۔ وفاقی وزیر قانون اور انصاف نے کہا کہ یہ ایک سٹیٹ آف دی آرٹ منصوبہ ہے، آج کے پی نے بھی یہ قانون پاس کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مستقبل میں آن لائن ویریفکیشن کے بعد گھر بیٹھے بھی وراثتی سرٹیفیکیٹس حاصل کئے جاسکتے ہیں۔ وفاقی وزیر قانون اور انصاف بیرسٹر فروغ نسیم نے اس اقدام پر وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار، وزیر داخلہ شیح رشید احمد، وزیر قانون پنجاب راجہ بشارت اور چئیرمین نادرا طارق ملک کو بھی خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ انہوں نے بہترین کام کیا ہے۔ انہوں نے کہ وراثتی سرٹیفیکیٹس کے اجراءسے عدالتوں پر مقدمات کے  دبائو میں  25 سے 30 فیصد  کمی ہو گی، بیرون ملک پاکستانی سفارت خانوں اور مشنز نے نادرا کے ساتھ ملکر اس کو لانچ کردیا ہے جس پر وزیر خارجہ اور سیکرٹری خارجہ مبارکباد کے مستحق ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں