36

حکومت گلگت بلتستان نے موزی مرض سے محفوظ رکھنے کے لئے اقدامات کیئے کورونا کے خلاف ویکسینیشن مہم بھی بھرپور طریقے سےجاری ہے

گلگت:محکمہ صحت گلگت بلتستان کی جانب سے کہا گیا ہے کہ عوام الناس کو معلوم ہے کہ کورونا وبا نے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے اور پوری دنیا اس وبا کو کنٹرول کرنے میں بہت سی مشکلات کا شکار ہے،ان حالات میں بالعموم حکومت پاکستان اور بالخصوص حکومت گلگت بلتستان نے عوام الناس کو اس موزی مرض سے محفوظ رکھنے کے لئے مختلف اقدامات کیئے ہیں۔کورونا کے خلاف ویکسینیشن مہم بھی بھرپور طریقے سےجاری ہے۔موجودہ دنوں میں کورونا کے کیسسز ذیادہ رپورٹ ہورہے ہیں اور اس وقت گلگت بلتستان میں کورونا کی اوسطاً شرح 14 فیصد ہے جن کی وجہ سے حکومت سخت اقدامات اٹھارہی اب تک 50 سے زائد ڈاکٹرز کی کنٹریکٹ ڈیوٹی سے غیر حاضری کی وجہ سے منسوخ کئیے جا چکے ہیں اور ان حالات میں کوئی نرمی نہیں کی جائے گی ان حالات میں ینگ ڈاکٹرز ایسوسی ایشن کی جانب سے سوشل میڈیا کی وساطت سے معلوم ہوا ہے کہ کنٹریکٹ ڈاکٹرز نے احتجاج کی کال دی اور تمام ہسپتال بند کرنے کا عندیہ دیا ہے۔یاد رہے کہ تقرری و تبادلے سروس کا حصہ ہے۔گلگت بلتستان کے تمام علاقوں کے عوام کو صحت کی سہولیات بہم پہنچانا حکومت کی زمہ داری ہے اور اس سلسلے میں تقرری اور تبادلے مفاد عامہ میں کئیے جاتے ہیں۔محکمہ صحت گلگت بلتستان کی جانب سے پریس ریلیز کے مطابق حکومت گلگت بلتستان نے ڈاکٹروں کے مطالبات کے مطابق مندرجہ ذیل انقلابی اقدامات اٹھائیں ہیں۔1۔ینگ ڈاکٹروں کے لئیے ٹریننگ پالیسی کی منظوری جس کے تحت 45 کے قریب ڈاکٹرز ملک کے دیگر شہروں میں حکومت کے خرچ پر ٹریننگ حاصل کررہے ہیں۔2۔ڈاکٹروں کی مشاورت سے انسینٹیو پیکیچ کی منظوری دی گئی ہے جس کے مطابق ڈاکٹروں کی تنخواہوں میں ڈیوٹی اسٹیشن کے حساب سے 90 فیصد سے 150 فیصد تک اضافہ ہوچکا ہے جو پورے ملک میں منفرد ہے۔3۔ڈاکٹرز کی کنٹریکٹ پر تعیناتی اور کنٹریکٹ کی توسیع۔4۔اسپیشلسٹ ڈاکٹرز کی تعیناتی کے لئیے ڈومیسائل اور عمر کی بالائی حد میں نرمی۔5۔تربیت یافتہ میڈیکل آفیسرز کو بحیثیت اسپیشلسٹ کام کرنے کی اجازت اور تنخواہوں اور مراعات میں خاطر خواہ اضافہ۔محکمہ صحت گلگت بلتستان کے مطابق موجودہ ایمرجنسی حالات میں جب کورونا کی چوتھی لہر کا آغاز ہوا ہے ہم سب کو زمہ داری کا مظاہرہ کرنا پڑے گا۔یاد رہے کورونا وبا کے دوران پوری دنیا اور ملک میں اس طرح کے کسی احتجاج اور سروس بند کرنے کی نظیر نہیں ملتی ہے۔کسی طرح کا احتجاج اور ڈیوٹی سے غفلت عوام الناس کیلئے ناقابل قبول ہے اور حکومت اس سلسلے میں ہر ممکن اقدامات اور فیصلے کریگی تاکہ موجودہ حالات میں عوام الناس متاثر نہ ہوں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں