46

کراچی اور لاہور جڑنواں شہر

حکومت کو چاہیے کہ کراچی اور لاہور کو بھی جڑنواں شہر قرار دیدے کیونکہ اس وقت دونوں شہروں میں صفائی ستھرائی،فضائی آلودگی اور قبضہ گروپوں کی صورتحال ایک جیسی ہے سیاسی آلودگی کے ساتھ ساتھ فضائی آلودگی نے بھی ہمیں چاروں طرف سے گھیر رکھا ہے ایک طرف لوٹ مار کے سیاسی نظام نے ہمیں معاشی طور پر مفلوج کررکھا ہے تو دوسری طرف فضائی آلودگی نے ہمیں جسمانی طور پر کمزور اور لاغر کردیا ہے اور ان دونوں حملوں نے ہمیں ذہنی مریض بنا کررکھ دیا ہے پاکستان کے دو بڑے شہروں کراچی اور لاہور کو اس وقت فضائی آلودگی نے اپنے لپیٹ میں لے رکھا ہے وہ تو بھلا ہو ہماری عدالتوں کا جو ہر عوامی فلاحی کاموں میں ہمیشہ بازی لی جاتی ہیں اب بھی شہر کی گندی صورتحال کو دیکھتے ہوئے لاہور ہائیکورٹ نے کمشنر کو شہر میں سموگ ایمرجنسی ڈیکلیئر کرنے کا حکم دے دیا جسٹس شاہد کریم نے سموگ اور ماحولیاتی آلودگی کے تدارک کے حوالے سے دائر درخواستوں پر سماعت کرتے ہوئے کمشنر لاہور سے کہا کہ آپ اس شہر کے مالک ہیں اور شہر کی کیا حالت کر دی ہے شہر کی صورتحال دیکھ کر شرمندگی ہونی چاہیے عدالت نے کمشنر لاہور کو سموگ ایمرجنسی ڈیکلیئر کرنے کا حکم دیتے ہوئے کہا کہ آلودگی پھیلانے والی فیکٹریوں کو تاحکم ثانی سیل کردیا جائے عدالت نے دھواں چھوڑنے والی گاڑیوں کو بھی بند کرنے کا حکم دیدیا اگر ہم شہر قائدکی صورتحال کا جائزہ لیں تو وہاں پر بھی موسم کی تبدیلی سے فضائی آلودگی میں اضافہ ہوا، شہرکی ہوا میں آلودگی کی شرح 168 پرٹیکیولیٹ میٹرکی ریکارڈحد عبور کرگئی ہے جو عام انسان کو بیمار کرنے کے لیے کافی ہے ہمارے ہاں سرکاری ہسپتالوں کی حالت کا بھی سب کو اندازہ ہے اور پارکوں کا بھی ان دونوں مقامات عام شہریوں کا آنا جانا لگا رہتا ہے ایک صحت کو بچانے کے لیے اور دوسری جگہ اپنی صحت کو بہتر بنانے کے لیے لیکن ان دونوں مقامات پر سانس لینا مشکل ہوچکا ہے شہروں کے اندر گرین بیلٹس فضائی آلودگی کو بہت حد تک کم کرنے میں اپنا کردار ادا کرتے ہیں جبکہ دنیا بھر میں شہروں کی خوب صورتی میں شان دار انفرا اسٹرکچر کے ساتھ ساتھ گرین بیلٹ ایریاز بھی اپنا کردار ادا کرتے ہیں لاہور اورشہر قائد کی خوب صورتی میں بھی گرین بیلٹ اہم کردار رہا ہے لیکن بد قسمتی سے یہ بھی مافیاز کا ہدف بن گئے ہیں کراچی ماسٹر پلان کے تحت ہر دوہری سڑک کے ساتھ گرین بیلٹ کا ہونا ضروری ہے مگر اس شہر میں ایسا کچھ بھی دیکھنے کو نہیں ملتا، 30 سے 40 فی صد گرین بیلٹس پر ریسٹورینٹس اور کار شورومز کا قبضہ ہے جب کہ بقیہ حصوں پر کچرا کنڈیاں اور پتھارے بنے ہوئے ہیں یا یہ گرین بیلٹ ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہیں اس وقت چالیس فی صد سے زائد گرین بیلٹ پر قبضہ مافیا بیٹھی ہوئی ہے جو المیے سے کم نہیں کیونکہ بہت سے گرین ایریاز ناقص منصوبہ بندی اور بد انتظامی کا شکار ہو کر صفحہ ہستی سے مٹ چکے ہیں شہر میں گھومنے نکلیں تو کئی علاقوں میں گرین بیلٹ کا تو نام و نشان نہیں ملتا البتہ اس کی جگہ کچرا کنڈیاں بدبو اور گندگی پھیلاتے ضرور ملتی ہیں کراچی شہر میں 10 ہزار کلومیٹر تک سڑکوں کا جال ہے جس کے ساتھ 100 فی صد گرین بیلٹ کا لازمی حصہ ہونا چاہیے مگر قبضہ مافیا اور متعلقہ اداروں کی عدم دل چسپی نے ان گرین بیلٹ کے خاتمے میں اہم کردار ادا کیا ہے کراچی جو کبھی اپنے معتدل موسم کے لیے مشہور ہوتا تھا اب سخت ترین گرم موسم اور فضائی آلودگی کی لپیٹ میں ہے اس کی بڑی وجہ بڑھتی آبادی، درختوں کی کمی،کنکریٹ سے بنی عمارتیں، دھواں چھوڑتی فیکٹریاں اور گاڑیاں ہیں ہیں ڈی جی پارکس جنید اللہ اس حوالہ سے بہت خوبصورت کا م کررہے ہیں اگر انکی کوششیں اسی طرح جاری رہی تو کراچی میں ہریالی نظر آنا شروع ہوجائیگی اور لوگ ماحولیاتی تبدیلی بھی محسوس کرینگے کیونکہ انہوں نے کراچی میں ڈھائی لاکھ پودے لگا دیے ہیں اسی طرح کراچی سے ملتی جلتی صورتحال لاہور کی بھی ہے جہاں قبضہ گروپوں نے گرین بیلٹ سمیت مختلف پارکوں پر بھی قبضے جما رکھے ہیں جبکہ لاہور کا کائی فٹ پاتھ بھی قبضہ گروپوں سے خالی نظر نہیں آتا باقی لاہور کو ایک طرف صرف مال روڈ اور ہال روڈ کو ہی ایک نظر دیکھ لیں مال روڈ پورے لاہور کا دل ہے اور اسکے ساتھ ہی ہال روڈ ہے جہاں ملھ بھر سے لوگ خریداری کرنے کے لیے آتے ہیں جو وہ یہاں دیکھ کر جاتے ہیں اسی پر وہ اپنے شہروں میں عمل کرتے ہیں ہال روڈ میں فٹ پاتھ نظر ہی نہیں آتا ہال کے روڈ یونین کے عہدیداروں نے فٹ پاتھ بھی ٹھیکہ پر چڑھا رکھے ہیں جہاں سے لاکھوں روپے روزانہ کرایہ وصول کیا جاتا ہے یہ روڈ پنجاب اسمبلی وزیر اعلی آفس،ہائیکورٹ اور سیکریٹریٹ کے قریب ترین ہے جہاں پورے پنجاب کو کنٹرول کرنے والے بیٹھے ہوئے ہیں اور انکی آنکھ کے نیچے اس روڈ پر قبضہ گروپوں کا راج ہیجو بدمعاشی سے ہال روڈ کی ایک ایک انچ پردھڑلے سے قابض ہیں اور مقامی پولیس انکی سہولت کار بنی ہوئی ہے کارپوریشن اس طرف منہ نہیں کرتی کیونکہ یہ بااثر لوگ ہیں اور انکے مقابلہ میں کسی دور دراز علاقے کی خالی سڑک پر کوئی رہڑھی لگائے اپنے بچوں کا رزق تلاش کررہا ہے تو اسے کارپوریشن والے اسکی رہڑی کو اٹھا کر ایسے پھینکتے ہیں جیسے ہمارے لوگ اپنا کچرا کسی کے مکان کے سامنے پھینکتے ہیں لاہور باقی شہروں کے لیے ایک مثال کی حیثیت رکھتا ہے لیکن اس شہر کو مثالی بنانے میں ہماری انتظامیہ کی کوئی کوشش نظر نہیں آتی جسکے بعد مجبورا عدالت کو ہی ہر کام میں مداخلت کرنا پڑی ویسے تو نگران وزیر اعلی پنجاب محسن نقوی بھی اس حوالہ سے بہت اچھے کام کررہے ہیں ہمارے ہسپتالوں کی حالت بہت حد تک بہتر ہوچکی ہے اور لاہور میں فضائی آلودگی کے حوالہ سے مختلف ماہرین سے مشاورت اور ملاقاتوں کے بعد انہوں نے پنجاب بھر میں سموگ ایمرجنسی نافذ کرتے ہوئے ایک ماہ کے لئے تمام سرکاری و نجی سکولوں میں طلبا و طالبات کیلئے ماسک لازمی قرار دیدیا ہے عوام سے بھی اپیل کی ہے کہ وہ ماسک کا استعمال کریں انہوں نے ایک اور اچھا کام یہ بھی کیا ہے کہ سموگ کے دوران کاشتکاروں کے خلاف چالان واپس لینے کا حکم دے دیا اور ان سے بھی کہا ہے کہ کاشتکار بھائی فصلوں کی باقیات نہ جلائیں بلکہ انہیں مناسب طریقے سے تلف کیا جائے اسکے ساتھ ساتھ انہوں نے انتظامیہ کوہدایت کی کہ دھواں چھوڑنے والی گاڑیوں اور فیکٹریوں کے خلاف بلاامتیاز کارروائی جاری رکھی جائے کیونکہ اس وقت لاہورشہر میں فضائی آلودگی میں بدستور اضافہ ہورہا ہے شہر میں آلودگی کی مجموعی شرح 430ریکارڈ کی گئی جسکے بعدلاہور آلودہ ترین شہروں کی فہرست میں ایک بار پھر پہلے نمبر پر آ گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں